Contact Us

info@jamiat.org.in

Phone: +91-11 23311455, 23317729, Fax: +91 11 23316173

Address: Jamiat Ulama-i-Hind

No. 1, Bahadur Shah Zafar Marg, New Delhi – 110002 INDIA

Donate Us

JAMIAT ULAMA-I-HIND

A/C No. 430010100148641

Axis Bank Ltd.,  C.R. Park Branch

IFS Code - UTIB0000430

JAMIAT RELIEF FUND

A/C No. 915010008734095

Axis Bank Ltd.  C.R. Park Branch

IFS Code-UTIB0000430

ہاشم پورہ قتل عام کے مجرمین کی ضمانت عرضی خارج

December 12, 2018

ہاشم پورہ قتل عام کے مجرمین کی ضمانت عرضی خارج 
جمعیۃ علما ء ہند کی سپریم کورٹ میں مخالفت کامیاب ، تنظیم کے جنرل سکریریٹری مولانا محمود مدنی نے فیصلے کا استقبال کیا 

 



نئی دہلی ۱۲؍دسمبر۲۰۱۸ء 
ملک کی سب سے بڑی عدالت سپریم کورٹ نے ہاشم پورہ قتل عام کے مجرمین کی عرضی کو خارج کرتے ہوئے پی اے سی کے ان جوانوں کی راہ مشکل کردی ہے جنھوں نے لازمی گرفتاری سے بچنے کے لیے عدالت کا رخ کیا تھا، یہ وہ جوان ہیں جو دہلی ہائی کورٹ کے سخت رخ کے باوجود خود کو سریندر نہیں کررہے ہیں۔ساتھ ہی سپریم کورٹ نے مجرم نرنجن لال، مہیش پرساد، جے پال سنگھ اور سمیع اللہ کی ضمانت عرضی (کریمنل اپیل نمبر 154-49-2018) کو بھی خارج کردیا ہے۔
جسٹس یو یو للت اور جسٹس نوین سنہا کی بنچ نے یہ فیصلہ  جمعیۃ   علماء ہند کے وکلاء کی مخالفت کے بعد سنایا۔ جمعیۃ  علماء ہند، ہاشم پورہ کے متاثرہ افراد باب الدین اور مجیب الرحمن کی جانب سے مقدمات کی پیروی کررہی ہے۔عدالت کے اس فیصلے پر جمعےۃ علماء ہند کے جنرل سکریٹری مولانا محمود مدنی نے اطمینان کا اظہار کیا ہے۔
واضح ہو کہ دوماہ قبل ۳۱؍اکتوبر ۲۰۱۸ء کو دہلی ہائی کورٹ نے پی اے سی کے ریٹائرڈ سولہ جوانوں کو عمر قید کی سزا سنائی تھی جو ۱۹۸۷ء میں ہاشم پورہ اترپردیش کے رہنے والے42؍مسلمانوں کے قتل عام میں شامل تھے ۔ہائی کورٹ کے فیصلے کے بعد مجرم بدھی سنگھ ، بنست ولبھ ،رام ویر سنگھ ، لیلا دھار نے سپریم کورٹ سے رجو ع کرکے خود کو گرفتاری سے مستثنی رکھنے کی درخواست دی تھی ، جب کہ ایک دوسری عرضی میں نرنجن لال پرساد وغیرہ نے ضمانت کی درخواست داخل کی تھی ۔عدالت عظمی نے سبھی عرضیوں کو خارج کردیا ہے تاہم فیصلے کو چیلنچ کرنے والی عرضی کو اگلی سماعت کے قبول کرلیا ہے ۔
جمعیۃ   علماء ہند کی طرف سے ایڈوکیٹ شکیل احمد سید، ایڈوکیٹ پرویز دباس، ایڈوکیٹ عظمی جمیل حسین،ایڈوکیٹ سید احمد دانش عدالت میں پیش ہوئے ۔ عدالت کے اس رخ پر شکیل احمد سید نے بتایا کہ ہائی کورٹ کے فیصلے کے بعد ہی گزشتہ ماہ نومبر میں  جمعیۃ  علماء ہند کے جنرل سکریٹری مولانا محمود مدنی کے مشورے کے بعد ہم نے سپریم کورٹ میں کیویٹ داخل کردی تھی ۔اس معاملے میں سماعت کے دوران  جمعیۃ   علماء ہند نے متاثرین کی طرف سے پوری مستعدی سے اپنا موقف رکھا ہے تا کہ قرار واقعی سزا سے بچ نہ سکیں ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 

Share on Facebook
Share on Twitter
Please reload

Recent Posts

August 9, 2017

Please reload

Follow Us
  • Jamiat Ulama-i-Hind JUH
  • Jamiat Ulama-i-Hind JUH